سیلاب کے بعد پاکستان کو پرخطر وبائی امراض کا سامنا ہو سکتا ہے: عالمی ادارہ صحت (WHO)

image

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (WHO) کا کہنا ہے کہ پاکستان میں سیلاب کے بعد جمع شدہ پانی کی وجہ سے پاکستان کو خطرناک وبائی امراض اور انکے سبب اموات کا سامنا ہو سکتا ہے۔

 واشنگٹن: ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (WHO) کے ڈائریکٹر ڈاکٹر ٹیڈروس نے پاکستان میں سیلاب کی تباہ کاریوں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مختلف جان لیوا وباؤں کے پھیلاؤ سے خبردار کیا ہے۔ اپنے ایک بیان میں سربراہ عالمی صحت کا کہنا تھا کہ پاکستان میں سیلاب کے بعد ایک اور ناگہانی آفت وبائی امراض کے پھوٹنے اور ان سے ہونے والے جانی نقصان کی صورت میں سر اُٹھا سکتی ہے۔

سربراہ عالمی صحت نے پاکستان کے سیلاب زدگان کے لیے 10 ملین ڈالر کی امداد کی اپیل جاری کرنے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں سیلاب سے دو ہزار سے زائد صحت کے مراکز تباہ ہوگئے جس سے وبائی امراض سے نمٹنے کی صلاحیت کم ہوگئی ہے۔

خیال رہے کہ سیلابی پانی تاحال کئی علاقوں میں کئی کئی فٹ موجود ہے جس سے ڈینگی، ملیریا، ٹائیفائیڈ اور جلد کی بیماریوں کا بڑے پیمانے پر پھیلاؤ کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔